پیر, 12 اپریل 2021


تعلیمی شعبےمیں تفریق ختم کرنےکیلئےیکساں قومی نصاب کانفاذیقینی بناناہوگا،صدرِمملکت

اسلام آباد: صدرمملکت ڈاکٹرعارف علوی کی زیرِصدارت ایوانِ صدرمیں یکساں قومی نصاب پراجلاس منعقد ہوا۔

اجلاس میں وفاقی وزیرِ تعلیم شفقت محمود، وزیرِ سائنس و ٹیکنالوجی فواد چوہدری،وفاقی وزیر برائے انسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری، وزیرِ مملکت پارلیمانی امور علی محمد خان شریک تھے۔

اجلاس میں صدر مملکت کو یکساں قومی نصاب کی تیاری پر بریفنگ دی گئی جس میں کہا گیا ہے کہ یکساں قومی نصاب نہ صرف نجی شعبے، دینی مدارس سمیت تمام وفاقی اکائیوں اور متعلقہ اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت سے تیار کیا گیاہےبلکہ ملک کی تعلیمی ضروریات کے لئے بین الاقوامی معیار کے مطابق تیار کیا گیاہے۔

بریفنگ میں مزید بتایا گیا کہ یکساں قومی نصاب کو تین مراحل میں ڈیزائن کیا گیا ہے تعلیمی سال 2021-22 کے دوران پہلے مرحلے میں 1 تا 5 گریڈ کے طلباء کے لئے نیا نصاب متعارف کرایا جائے گا، دُوسرے مرحلے میں گریڈ (6-8) اور تیسرے مرحلے میں (9-10) کے لئے نصاب کی تیاری شروع کردی گئی ہےجسے تعلیم کے تمام شعبوں میں لاگو کیا جائے گا
علاوہ ازیں یکساں قومی نصاب قرآن و سنت ، آئین ، قومی پالیسیاں اور قومی معیارات پر مرکوز ہوگاپائیدار ترقی کے اہداف، قائداعظم اور علامہ اقبال کے نظریات اور قومی اقدار پر بھی توجہ مرکوز کی جا ئیگی۔

اجلاس سےخطاب کرتے ہوئے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کا کہناتھاکہ تعلیمی شعبے میں تفریق ختم کرنے کیلئے یکساں قومی نصاب کا نفاذ یقینی بنانا ہوگا، طلبہ میں کردار سازی، تنقیدی اور تخلیقی سوچ فروغ دینے پر توجہ مرکوز کرنا ہوگیملکی سماجی و اقتصادی ترقی کیلئے معیاری اور تحقیق پر مبنی تعلیم دینا ہوگی۔

پرنٹ یا ایمیل کریں

Leave a comment